غلاف کعبہ اٹھا دیا گیا ،اس کی جگہ سفید چادر لگا دی گئی ، مگر ایسا کب اور کیوں کیا جاتا ہے؟ایک معلوماتی خبر

جدہ(ویب ڈیسک) حج بیت اللہ کی تیاریوں کے سلسلے میں حرمین شریفین کی انتظامیہ کی طرف سے آج غلاف کعبہ کے نچلے حصے کو زمین سے 3میٹر بلند کر دیا گیا ہے۔ عرب نیوز کے مطابق غلاف اٹھائے جانے سے نیچے کعبہ کے نظر آنے والے حصے کو سفید کاٹن کے کپڑے سے ڈھانپ دیا گیا ہے

جس کا عرض دو میٹر کے قریب ہے۔ رپورٹ کے مطابق ہر سال حج سے قبل غلاف کعبہ کو اوپر اٹھا دیا جاتا ہے اور حج سیزن کے بعد اسے اس کی پرانی حالت پر کر دیا جاتا ہے۔ غلاف کعبہ کو اٹھائے جانے کا مقصد حج کے دوران غلاف کی صفائی اور حفاظت کو یقینی بنانا ہے۔ حج سیزن کے دوران حجاج کرام کی بڑی تعداد غلاف کعبہ کو چھونے اور اس سے لپٹنے کی خواہش کرتی ہے جس کے نتیجے میں غلاف مبارک کو نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہوتا ہے۔ چنانچہ حج سے قبل اسے زمین سے اوپر اٹھا دیا جاتا ہے۔ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق سعودی عرب میں غیرملکیوں کے کئی سیکٹرز میں نوکریاں کرنے پر پابندی عائد کی جا چکی تھی، اب تارکین وطن کے لیے ایک اور بری خبر آ گئی ہے کہ مزید 41قسم کی نوکریاں صرف سعودی باشندوں کے لیے مختص کرنے کا فیصلہ کر لیا گیا ہے۔ عرب نیوز کے مطابق سعودی وزیر محنت و سماجی ترقی احمد بن سلیمان الرجحی کی طرف سے حکم جاری کیا گیا ہے کہ مدینہ منورہ میں 41قسم کی نوکریوں پر صرف سعودی مردوخواتین کو رکھا جائے گا۔ ان میں کلوزڈ مارکیٹس، کمرشل سنٹرز، مالز، این جی اوز، ہاسپٹلٹی اور ٹورازم کے شعبوں کی نوکریاں شامل ہیں۔ وزارت محنت کی طرف سے جاری بیان میں ان نوکریوں کی مزید تفصیل بتائی گئی ہے کہ ”لائٹ وہیکل ڈرائیور، آرڈر ٹیکر، سیفٹی اینڈ سکیورٹی آفیسر، ایڈمنسٹریٹو کلرک، سیکرٹری، جنرل سروسز سپروائزر، روم سروس سپروائزر، مینٹی نینس سپروائزر، سیلزاینڈ مارکیٹنگ سپروائزر، ٹورازم پروگرامز سپروائزر، فرنٹ آفس سپروائزر، سپروائزر آف ٹیلی فون آپریٹرز و دیگر نوکریوں پر اب غیرملکی کام نہیں کر سکیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں