صرف میشا شفیع نہیں اسکے ساتھ 4 اور خواتین بھی ملی ہوئی ہیں جو مجھے بدنام کرنا چاہتی ہیں ۔۔۔۔ سیشن جج کی عدالت میں علی ظفر کا ناقابل یقین انکشاف

لاہور(ویب ڈیسک)ایڈیشنل سیشن جج امجد علی شاہ کی عدالت میں گلوکارہ میشا شفیع کے خلاف ہتک عزت کے دعویٰ کے کیس میں گلوکار علی ظفر نے بطور درخواست گزار اپنا تفصیلی بیان قلمبند کرا دیاہے،3گھنٹے تک اپنا بیان ریکارڈ کرانے والے علی ظفر کا کہناہے کہ میشا شفیع کے علاوہ اس کی چار دوست خواتین نے

بھی منظم سازش کے تحت سوشل میڈیا کی “می ٹو تحریک” سے جھوٹی شہرت حاصل کرنے کے لئے مجھ ہر جنسی ہراسگی کے الزمات لگائے ہیں،الزامات سے مجھے کروڑ کا نقصان ہوا شدید ذہنی اذیت ہوئی، محنت سے کمایا ہوا نام اور ساکھ خراب ہو گئی،گزشتہ سماعت پر بھی ساڑے تین گھنٹے بیان قلمبند ہوا میشا شفیع کے وکلا ء تفصیلی بیان سے تھک گئے تو علی طفر نے کہا تھکاوٹ اتارنے کے لئے آپ کو گانے سنا دیتا ہوں مگر میرا مکمل بیان قلمبند ہونے دیں مجھے اپنے نام پر لگے داغ کو دھونا ہے 2004 سے ملک کو ٹیکس دے رہا ہوں، سوشل میڈیا پر میرے خلاف مہم چلائی سوشل میڈیا تحریک “می ٹو” کو میرے خلاف غلط استعمال کیا گیا اس نے استدعا کی میشا شفیع سمیت الزام لگانے والی دیگر خواتین کو عدالت میں طلب کیا جائے، عدالت نے مزید سماعت 15جولائی تک ملتوی کردی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں