بشکیک: مودی سمیت تمام ممالک کے سربراہان کی ہال میں آمد، وزیر اعظم پاکستان کرسی پر ہی بیٹھے رہے ، عمران خان کے رویے نے بھارتیوں کو جلا کر رکھ دیا

بشکیک(نیوز ڈیسک) وزیراعظم عمران خان شنگھائی تعاون تنظیم کے اجلاس میں شرکت کے لیے اس وقت بشکیک کرغزستان میں موجود ہیں۔ سوشل میڈیا پر ایک وزیراعظم عمران خان کی ایک ویڈیو وائرل ہوئی جس میں دیکھا گیا کہ بشکیک میں منعقد ہونے والے اجلاس کے دوران جب سبھی ممالک کے سربراہان آرہے تھے

اُس وقت پروٹوکول کے مطابق کھڑے ہونے کی بجائے وزیراعظم عمران خان کُرسی دیکھتے ہی اس پر براجمان ہو گئے۔جبکہ آس پاس موجود تمام لوگ کھڑے ہوئے تھے۔ وزیراعظم عمران خان کے اس رویے کو عالمی میڈیا بالخصوصی بھارتی ٹی وی چینلز کی توجہ بھی حاصل ہوئی۔ بھارتی میڈیا نے وزیراعظم پاکستان عمران خان کے اس برتاؤ کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ پاکستان کے وزیراعظم کو صرف اور صرف کُرسی سے پیار ہے۔کیونکہ بشکیک کی بیٹھک میں جب تمام ممالک کے سربراہان ہال میں داخل ہو رہے تھے اور پہلے سے موجود سربراہان ایک دوسرے کے احترام میں اپنی نشستوں پر کھڑے تھے تب ہی پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے کھڑے ہونے کی بجائے بیٹھنے کو ترجیح دی اور اپنی کُرسی پر براجمان ہو گئے۔بھارتی ٹی وی چینل نے اپنی رپورٹ میں کہا کہ پاکستان کے وزیراعظم عمران خان کو عالمی کانفرنسز میں شرکت کے آداب تک نہیں آتے ، یہی وجہ ہے کہ وہ مودی سمیت دیگر ممالک کے سربراہان کی آمد پر اپنی نشست پر بیٹھے رہے اور کھڑے تک نہیں ہوئے۔ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ عمران خان کا تعارف کرواتے ہوئے دوبارہ سے نام لیا گیا جس پر وہ لمحہ بھر کے لیے کھڑے ہوئے اور پھر سے بیٹھ گئے۔ان کے بعد روسی صدر ولادیمیر پیوٹن اور دیگر کا نام پکارا گیا جن کا سبھی سربراہان مملکت نے کھڑے ہو کر استقبال کیا لیکن عمران خان اپنی نشست پر بیٹھے رہے جو کہ سفارتی آداب کے خلاف ہے۔ عمران خان کے ہمراہ ہی بھارتی وزیراعظم نریندرا مودی بھی ہال میں داخل ہوئے لیکن دونوں نے ایک دوسرے کو مکمل طور پر نظرانداز کیا۔ وزیراعظم عمران خان کی یہ ویڈیو سوشل میڈیا سائٹس پر بھی کافی وائرل ہو رہی ہے جس پر انٹرنیٹ صارفین ملے جُلے رد عمل کا اظہار کر رہے ہیں۔سوشل میڈیا پر کچھ صارفین نے وزیراعظم عمران خان کے اس اقدام کی مخالفت کی اور کہا کہ اتنے بڑے فورم پر وزیراعظم عمران خان کا یوں برتاؤ کرنا اور تذبذب کا شکار ہونا نہ صرف سفارتی آداب کی خلاف ورزی ہے بلکہ عالمی سطح پر ہمارے امیج کے لیے اچھی بات نہیں ہے۔ جبکہ کچھ صارفین کا کہنا تھا کہ چونکہ وزیراعظم عمران خان نریندر مودی کی آمد پر بھی کھڑے نہیں ہوئے لہٰذا بھارتی اس بات پر کافی آگ بگولہ ہیں اور اسی لیے عمران خان کو تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں