خلیج عمان سے مشکوک کشتی پکڑ لی گئی لیکن اس میں سے کیا خطرناک ترین چیز ملی اور کہاں منتقل کی جارہی تھی ؟ نیا تنازعہ کھڑا ہوگیا

واشنگٹن(ویب ڈیسک) امریکہ نے خلیج عمان سے تحویل میں لی گئی ایک کشتی سے برآمد ہونے والے ایرانی میزائلوں کی تصاویر جاری کر دی ہیں۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکا نے دو روز قبل یمن جانے والی ایک چھوٹی کشتی خلیج عمان سے پکڑی تھی، اس کشتی میں سے ایرانی میزائل برآمد

ہوئے ہیں۔ امریکی حکام نے دعویٰ کیا تھا کہ یہ میزائل ایران سے یمن حوثی باغیوں کو بھیجے جارہے تھے۔امریکی دفتر خارجہ کے ایلچی برائے ایران برائن ہک نے ایک پریس کانفرنس کے دوران ضبط کیے گئے ایرانی میزائل کی تصاویر میڈیا کو دکھائیں۔ خطرناک میزائل یمن میں برسرپیکار حوثی باغیوں کو دیئے جانا تھا۔ علاوہ ازیں کشتی سے بارودی مواد بنانے کا سامان بھی برآمد ہوا تھا۔ایران نے پکڑے گئے میزائل پر کسی قسم کا تبصرہ کرنے سے گریز کیا ہے، امریکا اور سعودی عرب یمن میں ایرانی مداخلت کا الزام عائد کرتے آئے ہیں تاہم یہ پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ اتنی بڑی مقدار میں ایرانی میزائل پکڑے گئے ہوں۔واضح رہے کہ امریکی بحریہ اور کوسٹ گارڈ نے مشترکہ کارروائی کے دوران خلیج عمان میں ایک چھوٹی کشتی کو پکڑا تھا، کشتی کو یمنی کوسٹ گارڈ کے حوالے کر دیا گیا تھا جبکہ میزائل امریکا کی تحویل میں ہیں۔دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وزیرِ خارجہ مولود چاوش اوگلو کا کہنا ہے کہ ترکی مشرقی بحیرہ روم میں اپنے بحری جہازوں کے تحفظ کے لیے لازمی تدابیر اختیار کرے گا۔ مالودچاوش اوگلو نے اطالوی دارالحکومت روم میں کوریئر دیلا سیرا اخبار کو انٹرویو میں مشرقی بحیرہ روم میں قبرص کے کھلے سمندر میں ترکی کی قدرتی وسائل تلاش کرنے کی سرگرمیوں میں طاقت کا استعمال کرنے یا نہ کرنے کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ ہم شمالی قبرصی ترک جمہوریہ کے ضامن ہیں، ہم نے مسئلے کا حل تلاش کرنے کے لیے ہر ممکنہ اقدامات اٹھائے ہیں، مخالف حریف کسی معاہدے کے حق میں نہیں، ہم قدرتی گیس کی تلاش کی سرگرمیوں کے یکطرفہ نہ کرنے اوراس کی آمدنی کی کمیشن کی جانب سے منصفانہ تقسیم کی تجویز پیش کرتے ہیں تاہم ہمارے فریق اس معاملے میں بات کرنے کے لیے ہی تیار نہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم کسی سے جنگ کرنے کے حق میں نہیں تا ہم اپنے بحری جہازوں کو تحفظ فراہم کرنا ہمارا فطری حق ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں